Poets

220+ Allama Iqbal Poetry in Urdu | Dr Allama Iqbal Shayari

Original Allama Iqbal Poetry in Urdu

Allama Iqbal Poetry in English Urdu

ترکوں کا جس نے دامن ہیروں سے بھر دیا تھا
میرا وطن وہی ہے میرا وطن وہی ہے

Turkon ka jis në daman hiron së bhar diya tha
Mëra vatan vahi hai mëra vatan vahi hai.

غلامی میں نہ کام آتی ہیں شمشیریں نہ تدبیریں
جو ہو ذوق یقیں پیدا تو کٹ جاتی ہیں زنجیریں

Ghulami mëin na kaam aati hain shamshirëin na tadbirëin
Jo ho zauq-ë-yaqin paida toh kat jaati hain zanjirëin.

جس کھیت سے دہقاں کو میسر نہیں روزی
اس کھیت کے ہر خوشۂ گندم کو جلا دو

Jis khët së dahqan ko mayassar nahi rozi
Us khët kë har khosha-ë-gandum ko jala do.

حرم پایک بھی اللہ بھی قرآن بھی ایک
کچھ بڑی بات تھی ہوتے جو مسلمان بھی ایک

Haram-ë-pak bhi allah bhi quran bhi ëk
Kuch badi baat thi hotë jo musalmaan bhi ëk.

کبھی اے حقیقت منتظر نظر آ لباس مجاز میں
کہ ہزاروں سجدے تڑپ رہے ہیں میری جبین نیاز میں

Kabhi ayë haqiqat-ë-muntazar nazar aa libas-ë-majaz mëin
Ki hazaaron sajdë tadap rahë hain mëri jabin-ë-niyaz mëin.

Dr. Allama Iqbal Shayari Urdu

ہوئے مدفون دریا زیر دریا تیرنے والے
طمانچے موج کے کھاتے تھے جو بن کر گہر نکلے

Huë madfun-ë-dariya zër-ë-dariya tairnë vaalë
Tamanchë mauj kë khatë thë jo ban kar guhar niklë.

جلال پادشاہی ہو کہ جمہوری تماشا ہو
جدا ہو دیں سیاست سے تو رہ جاتی ہے چنگیزی

Jalal-ë-padshahi ho ki jamhuri tamasha ho
Juda ho dëën siyasat së toh rah jaati hai changëzi.

ہزاروں سال نرگس اپنی بے نوری پہ روتی ہے
بڑی مشکل سے ہوتا ہے چمن میں دیدہ ور پیدا

Hazaaron saal nargis apni bë-nuri pë roti hai
Badi mushkil së hota hai chaman mëin dida-var paida.

اپنے من میں ڈوب کر پا جا سراغ زندگی
تو اگر میرا نہیں بنتا نہ بن اپنا تو بن

Apnë man mëin doob kar pa ja suragh-ë-zindagi
Tu agar mëra nahi banta na ban apna toh ban.

گلا تو گھونٹ دیا اہل مدرسہ نے تیرا
کہاں سے آئے صدا لا الٰہ الا اللہ

Gala toh ghont diya ahl-ë-madarsa në tëra
Kahan së aayë sada la ilaah il-lallah.

Previous page 1 2 3 4 5 6 7 8 9 10 11 12Next page

2 Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button