Poets

220+ Allama Iqbal Poetry in Urdu | Dr Allama Iqbal Shayari

Original Allama Iqbal Poetry in Urdu

Urdu Poetry Allama Iqbal

مذہب نہیں سکھاتا آپس میں بیر رکھنا
ہندی ہیں ہم وطن ہے ہندوستاں ہمارا

Mazhab nahi sikhata aapas mëin bair rakhna
Hindi hain hum vatan hai hindostan humara.

عروج آدم خایکی سے انجم سہمے جاتے ہیں
کہ یہ ٹوٹا ہوا تارا مہ کامل نہ بن جائے

Uruj-ë-adam-ë-khaki së anjum sahmë jaatë hain
Ki yë toota hua taara mah-ë-kamil na ban jaayë.

یہ جنت مبارک رہے زاہدوں کو
کہ میں آپ کا سامنا چاہتا ہوں

Yë jannat mubarak rahë zahidon ko
Ki main aap ka samna chahta hoon.

جب عشق سکھاتا ہے آداب خودآگاہی
کھلتے ہیں غلاموں پر اسرار شہنشاہی

Jab ishq sikhata hai adab-ë-khud-agahi
Khultë hain ghulamon par asrar-ë-shahanshahi.

فرقہ بندی ہے کہیں اور کہیں ذاتیں ہیں
کیا زمانے میں پنپنے کی یہی باتیں ہیں

Firqa-bandi hai kahin aur kahin zatëin hain
Kya zamanë mëin panapnë ki yahi batëin hain.

Allama Iqbal ki Shayari

مہینے وصل کے گھڑیوں کی صورت اڑتے جاتے ہیں
مگر گھڑیاں جدائی کی گزرتی ہیں مہینوں میں

Mahinë vasl kë ghadiyon ki surat udtë jaatë hain
Magar ghadiyan judai ki guzarti hain mahinon mëin.

کبھی چھوڑی ہوئی منزل بھی یاد آتی ہے راہی کو
کھٹک سی ہے جو سینے میں غم منزل نہ بن جائے

Kabhi chodi hui manzil bhi yaad aati hai raahi ko
Khatak si hai jo sëënë mëin gham-ë-manzil na ban jaayë.

من کی دولت ہاتھ آتی ہے تو پھر جاتی نہیں
تن کی دولت چھاؤں ہے آتا ہے دھن جاتا ہے دھن

Man ki daulat haath aati hai toh phir jaati nahi
Tan ki daulat chanv hai aata hai dhan jaata hai dhan.

خودی وہ بحر ہے جس کا کوئی کنارہ نہیں
تو آب جو اسے سمجھا اگر تو چارہ نہیں

Khudi woh bahr hai jis ka koi kinara nahi
Tu aabju isë samjha agar toh chara nahi.

گزر جا عقل سے آگے کہ یہ نور
چراغ راہ ہے منزل نہیں ہے

Guzar ja aql së aagë ki yë noor
Charaag-ë-rah hai manzil nahi hai.

Previous page 1 2 3 4 5 6 7 8 9 10 11 12Next page

2 Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button